کچھ پرانی غزلیں

اپنی چند پرانی غزلیں اس بلاگ میں شامل کر رہا ہوں۔ یہ غزلیں 19 سے 20 سال پہلے لکھی گئیں تھیں

فیض احمد فیض کی مشہور غزل کی زمین اور غزل کے ایک مصرے کا استعمال
 8/2/1991 
کب اس سے دل کی بات نہیں ، کب یادوں کی بارات نہیں
ہم اس  کو نہ بھول سکے ، گو اب  ہیں وہ  جذبات نہیں
 
کوئی دیوانوں سے بات کرے ، کوئی پوچھے یہ دل والوں سے
کیوں جاگتی آنکھوں سوتے ہیں ، کیوں سوتے ساری رات نہیں
 
جس شخص کی خاطر دکھ جھیلے ، اس نے ہی ہمیں بدنام کیا
نہ  اپنے لب پر شکوہ ھے  ، اور آنکھوں میں   برسات  نہیں
 
جب باغ کو خون سے سینچا ہے ، اور کانٹوں کو اپنایا  ہے
 پھولوں میں بھی اپنا حصہ ہے ، ہم حق لیں گے خیرات نہیں
 
جب  چاہا اس کو ٹھکرایا ،  جب  چاہا اس کو توڑ    دیا
ظالم کچھ تو سوچ ذرا ، یہ دل  ہے  کوئی  سوغات  نہیں
 
ہم نے تو عشق کی بازی میں ، جو کچھ تھا سب ہی وار دیا
“گر جیت گئے تو کیا کہنا ، ہارے بھی تو بازی مات  نہیں”
 —————————————————————————
                                                                                        
 8/9/1991 
یاد  تیری  جب  آتی    ہے          دل    اپنا     تڑپاتی     ہے
بھولی بھا لی صورت تیری        سب  کے من کو بھا تی  ہے
جب سے تیرا ساتھ ہےچھوٹا       تنہائی   بس   ساتھی    ہے
دیکھ  کے  تیور  دنیا  کے         مایوسی   سی   چھاتی   ہے
کیوں  رلائیں  اورں    کو          دکھ   اپنا   جب   ذاتی   ہے
ہم   جیسے  دیوانوں  سے         قسمت   روٹھی   جاتی   ہے
دل  کی  باتیں   نہ   مانیں         عقل  ہمیں   سمجھا تی    ہے
 
                 لوگوں معاذ کو مت چھیڑو                
                  یہ  تو بہت  جذباتی   ہے                 
  —————————————————————————–                                                             
 
 December 1991
ان سے نظر جو چار ہو گی        دل جگر کے پار ہو گئی
دیکھ کر حسن  کی   برہمی        خطا  یہ  بار بار  ہو گئی
عشق کا نشہ  ہے ایسا  نشہ        دار  بھی  دلدار  ہو  گئی
یاد  اس  کی  ایسی   بھلی         خزاں  میں  بہار  ہو گئی
شیخ  جی  کچھ   تو  کہیں        عبا  کیوں  تار تار  ہوگئی
زندگی کی خواہش میں ہمیں      خواہشوں کی ہار ہو گئی
 
                   معاذ اب غزل کیا لکھے
                    شاعری  بیوپار ہو گئی

———————————————————

Novemner 1991

غالب کی غزل  زمین میں ایک غزل

ھر چند کے گردش   ایام   بہت   ہے
اپنے لیے اللّہ کا ایک نام  بہت    ہے

آزادی کی فکر ہے نہ  کوشش نہ  تمنا
“یاریو ں کو قفس میں ابھی آرام بہت ھے

کس طرح کھڑے ہوں گے وہ دنیا کے مقابل
جن کے لیے مایوسی کی ایک شام بہت ہے

جو ہم نے کہا ان سے کہ جاں تم پہ فدا ہے
کہنے لگے رہنے دو ابھی  دام بہت  ھے

کیسے ہو  اب  ان سے  ملاقات  بھی  ممکن
ہمیں غم سے فرصت نہیں انہیں کام بہت ہے

یوں معاذ کا چرچا ہے لوگوں کی زباں پر
آدمی تو  اچھا   ہے مگر  ناکام  بہت  ہے

———————————————————————-

  ناصر کاظمی کی مشہور غزل کی زمین میں ایک غزل
یہ غزل 9 اکتوبر 1991 کو لکھی گئی

میں شعر غزل کے کیسے لکھوں ، اور سب کو سناؤں کس کے لیے
وہ شخص تو شہر ہی چھوڑ گیا ، نئی بات   بناؤں کس    کے   لیے

وہ جب تک اپنے شہر میں تھا ، ہم اس سے ہی دکھ کہہ لیتے تھے
اب راز کی باتیں کس سے کروں ، اور دل  تڑپاؤں کس کے  لیے

اس شخص  کی خاطر اورں  کی ،  ہر بات  گوارا  کرتے  تھے
ایک بات غلط اب سن  کر  بھی ، نہ برا  مناؤں  کس  کے  لیے

وہ  فیض ،  فراز، ناصر،  امجد ، سب   اپنے  اب غیر   ہوئے
میں ان کی نظمیں کیسے پڑھوں اور غزلیں گاؤں کس کے لیے

یہ   معاذ  ہوا   ہے  دیوانہ ، جو  ہر  ایک  سے  یہ   کہتا    ہے
میں دکھ جھیلوں کس کی خاطر ، اور خوشیاں مناؤں کس کے لیے

————————————————————————-

یہ غزل  23 جون  1992 کو لکھی گئی

کس نے اس  کو دیکھا  ھے       جس کا چاند سا چہرا ہے
اس  کی گہری  آنکھوں  میں       معصومیت کا  ڈیرا   ہے
سب ہی اس  کو  چاہتے  ہیں      خوش بختی نے گھیرا ہے
اس سے مل کر یوں لگتا ہے      جیسے کوئی سویرا  ہے
ہے  وہ  تھوڑی   پاگل   سی       عقل پر دل کا  پہرا  ہے
اس پیاری سی ایک لڑکی نے       ڈالا دل میں  بسیرا  ہے
کون جانے کہ عشق کی نگری    جنگل ہے کے صحرا ہے
                    خواب یہ کیسا معاذ نے دیکھا
                    آنکھ  میں  کچھ  نہ  ٹہرا  ہے

————————————————————————————

احمد فراز کے ایک مصرعے کی بنیاد پر اور اس کو استعمال کرکے یہ غزل 29 جولائی 1992 میں لکھی گئی
ٍ
پوچھا جو اُس نے حال ، جس بے رُخی کے ساتھ
کہنا پڑا  “سب ٹھیک  ہے” ، بے  دلی  کے  ساتھ

ہوتی نہیں شکایت  ایک  دوسرے سے  دوست
کچھ فاصلہ بھی رہے ، ایک دوسرے کے ساتھ

ویسے تو حالِ دل سنتے سناتے ہیں سب ہی لوگ
ہوتی  ھے  گفتگو  مگر ، کسی  کسی  کے  ساتھ

ہم یوں  تو  دردِ  عشق کے  قائل   نہیں   رہے
کرتا گیا  یہ دل  میں اثر  خاموشی  کے  ساتھ

اب  معاذ  کیا  بتائیں اپنی  رسوائی  کا  سبب
“ملتے تھے ہم خلوص سے ہر آدمی کے ساتھ”

————————————————————————————-

26 ستمبر 1992 کو ایک قطعہ لکھا ۔ پھر 2 شعر مزید۔ اس میں بھی ایک مصرعہ مستعار لیا گیا ہے

زباں پہ آ نہیں سکتا میرے،بسا جو دل میں ہے
سمجھ لو یہ کہ ایک طوفاں رکا ساحل میں ہے

بذاتِ خود   ہر   جگہ   جانا    اچھا    نہیں    لگتا
“ذکر میرا مجھ سے بہتر ہے اگر محفل میں ہے ”

سفر کی  ابتدا   ہی   میں   ہمت     ہارتے     کیوں    ہو
بہت اذیت ، بہت مشکل ، بہت دوری ابھی منزل میں ہے

خبر ہے معاذ کی  تم کو کہو کیا حال ہے اس   کا
سنا ہے  مان کر  دل  کی  بڑی  مشکل  میں   ہے

 

4/12/2012

حسن جمال کے قصے اب پرانے ہو گئے
آپ  سے  ملے  ہوئے کئی  زمانے  ہو گئے
 
پوچھتے  کیوں  ہیں ؟، آپ کو تھی خبر
کس طرح ہم  آپ  کے  دیوانے  ہو گئے
 
میرا  تیرا تعلق چھوٹی سی کہانی تھی
لوگوں کی زباں پہ آئے تو  فسانے  ہو گئے 
 
کل رات بس چند لمحے ہی آنکھ لگی
آپ آئے تو خواب بھی سھانے  ہو گئے
 
محفل  میں آپ  کے کچھ شعر  کیا  پڑھے
میرے   لیے  زمانے   کے   طعنے   ہو گئے 
 
عشق  نے  مجھے  ہر  قدم  ہی رسوا کیا
آپ تو ملے نہیں ، اپنے بھی بیگانے ہو گئے
 
آپ  ہی  میری  زندگی  کی  خواہش تھے
آپ ہی میری موت کے  بہانے    ہو گئے 

 

About MAAZ SIDDIQUI

میرا پورا نام معاذ المساعد صدیقی ہے. میں 1998 سے نیو یارک میں رھائش پذیر ھوں اور سٹی گورنمنٹ کے ایک ادارے Department of Social Services میں ڈائریکٹر (MIS & Reporting ) کے طور پر کام کرتا ہوں. 1987 میں N. E. D. یونیورسٹی کراچی سے مکنیکل انجینئرنگ میں BS اور 2005 میں City Univercity New York سے کمپیوٹر سائنس میں ماسٹر کیا ہے
This entry was posted in غزل and tagged , . Bookmark the permalink.

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s