کوئی نہ سمجھے ہے یہ بات

یہ غزل 23 جون 2011 کو لکھی گئی

 
کوئی نہ سمجھے ہے  یہ  بات
عشق   نہ  پوچھے کوئی  ذات
 
       دل ہی دوست ہے دل ہی دشمن
جیت   کر ہم  نے کھا ئی   مات
 
جو  تم  کہہ  دو ہم  کو یقیں ہے
 جھوٹی    ہو   یا  سچی    بات
 
 نہ کوئی حرکت نہ کوئی کوشش
  کیسے  بدلیں    گے     حالات
 
درد  دل جو اس  نے   دیا   ہے
وہ   ہے   اپنے   لیے   سوغات
 
کتنی    ظالم    ان    کی  ادائیں
“اور   میرے   نازک   جذبات”
 
آپ   ھی    اپنا    جواب    تھے
اس    کے    سارے    سوالات

 
آہ    یہ       میری       تنہائی
اف   یہ    کتنی    لمبی   رات
 
کیسا       مرنا      کیسا     جینا 
آزاد   اجل    ہے    قید   حیات
 
ان کے  در پر  سر رگڑے  ہے
بس    یہ    معاذ    کی   اوقات

About MAAZ SIDDIQUI

میرا پورا نام معاذ المساعد صدیقی ہے. میں 1998 سے نیو یارک میں رھائش پذیر ھوں اور سٹی گورنمنٹ کے ایک ادارے Department of Social Services میں ڈائریکٹر (MIS & Reporting ) کے طور پر کام کرتا ہوں. 1987 میں N. E. D. یونیورسٹی کراچی سے مکنیکل انجینئرنگ میں BS اور 2005 میں City Univercity New York سے کمپیوٹر سائنس میں ماسٹر کیا ہے
This entry was posted in غزل. Bookmark the permalink.

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s